اسکی مخبت مں سمندر

ازاد ھیں


         ازاد ھیں یہ صبح کی تازہ ھوایہں کرتی ھیں سرگوشی

کچھ بھی ھو ھم سبھی کے واسطے اس خوشی میں 
یونھی رھں بہاریں پھولوں کی سبزوشاداب وادی اٹھتی
چلی اتی ے جھیل کے پانی سا شور شگفتہ شگفتہ 
 ازاد ھیں تم بھی ساتھ دو ان فضاوں کا رواں ے
دریا لعل و گوھر کا مست ھو کر گنگناو دھیرے
سے مسکراو وھی تو ے رواں ے مجھ میں وہ
جو شاخ سبز پے کھلا ے گا گا کے سناتا ے
وہ خوشی کے گیت وہ جو بیٹھا ے شاخ صبح
پے زندگی دے کر بھڑتا رھوں حد نظرتک
زمزمے چھاے دنیا کیی اے سراپا بہار ھو جاے بارس
انہی راہوں میں گزر کر پچھا دیتے ھیں جیت محبت کی
 
اتی ے سمندر عمر سے یہ لالہ زار تاروں کی روشنی 

سے برستی پھوار                              

View ruby's Full Portfolio