اردوپیاری

بارش میں

   

 

 بارش میں اتا ے بھيگنے کا خوب مزہ 

بچے بڑے سبھی خوش مگن بھیگتے 
اور بجلی کڑکتی جب جب بھاگتے چلتے پانی کی چھپ چھپ
برستا جاے رے بنا کچھ کہے 
غریب کی کٹیا پے کیا گزرے گی 
یہاں وھاں بوندوں کو چھلکاتی خوب مز
پھولوں پے گنگناتی پیژوں کی شاخوں پر 
رم جھم رم جھم پتوں کو چھوتی تازگی 
کیسے سمجھاے نرم سی آواز بھلی بھاتی ے نمی 
برستی جاے ے لہجے میں محبت کی ھنسی 
نمی کی مہک سے سرسبز جل تھل لگی جھڑی
موسم کھل گیا پھوار سے چھیڑے فضاں   
بھیگی شام جو گم سی ے جوٹہر گیی
بارھا  مجھ سے کہا بہار سے کم نہں
کھلتے رھنا بھی کیا خوب شبنمی بہار ھے
پھول سی محبت کی بارش ے اب نہ رکے 
 

بھیگی شام جو گم سی ے جوٹہر گیی        

View ruby's Full Portfolio